CSS Forum Bahawalpur

Contact information, map and directions, contact form, opening hours, services, ratings, photos, videos and announcements from CSS Forum Bahawalpur, Education, Maheen Academy of Arts and Sciences, St. Louis, MO.

Operating as usual

Photos from CSS Forum Bahawalpur's post 11/14/2022

24 گھنٹوں میں 2 ایکسیڈنٹ 2 اسسٹنٹ کمشنر زندگی کی بازی ہار گئے۔ اناللہ وانا الیہ راجعون

1۔اسسٹنٹ کمشنر لورالائی جمیل رند ٹریفک حادثہ میں جان کی بازی ہار گئے
یہ ذہین محنتی خوبصورت نوجوان ایک اخبار فروش کا بیٹا تھا، اپنی قابلیت سے اسسٹنٹ کمشنر بنا ،22 نومبر کو شادی ہونا تھی۔

2۔پھولنگر
بائی پاس پر ویگو ڈالے اورکیری ڈبے میں تصادم،حادثے میں اسسٹنٹ کمشنر پتوکی قاسم محبوب سمیت 2 افراد موقع پر جانبحق

دعا ہے کہ اللہ پاک دونوں حادثات میں جاں بحق ہونے والوں کو جنت الفردوس میں اعلی مقام عطا فرمائےاور ان کے گھر والوں کو صبر جمیل عطا فرمائے،آمین

11/04/2022

, disasters and corruption in Pakistan

is a disaster-prone country prone to floods, polio, and dengue. The state has suffered several economic, educational, ethnic, and financial challenges. The recent inflation has worsened the situation as people live hand-to-mouth lives in the country. One has to suffer a lot because the prices of daily products, including fuel, electricity, sugar, oil, rice, flour, gas, and tea, have been sky-high and made it difficult to survive. Whether rich or poor, a businessman or a salaried individual, everybody is worried, and nobody knows where the situation will go. Meanwhile, diseases and disasters are not sparing the lives of the country’s inhabitants. Also, recent foods have caused billions of rupees as half of the country submerges in the water. But, by the grace of Allah Almighty, the situation is under control now, and every citizen is willingly donating for the betterment of the flood victims.

For quite a few months, Pakistan has been suffering from one of the most dangerous diseases (dengue). Specifically, the province of Punjab is the most affected among all others. During the last 24 hours, more than 450 people have tested positive for the virus, taking the total number of such cases reported this year to 5,413. And according to the official statistics, most claims surfaced in Gujranwala, Rawalpindi, and Lahore. Due to recent rains, and floods in south Punjab, the officials have warned that dengue poses a severe threat to citizens of all age groups. Moreover, it has been seen that the health department and authorities are merely taking action or launching anti-dengue activities. The situation is getting worse with every passing day as more and more people are getting prey to the dangerous virus. We unwillingly have to see more people on their deathbeds if actions are not taken. When the virus outbroke a decade ago, the health department did a great job by holding 40 consecutive high-level sessions to eradicate this disease. But unfortunately, the authorities and concerned departments are not so serious this time which is why no serious actions have been taken yet. And the public is waiting for somebody to be their Messiah and do something for their betterment and fast recovery. In a session with a retired health official, I came to know that when the dengue outbroke some years ago, thousands of members of the health team visited the rooftops of houses, official residences, commercial buildings, markets, and educational institutions to destroy the larva. In addition, hundreds of thousands of cases were lodged across the province under anti-dengue regulations.

10/31/2022

on the cards

10/30/2022

Why this conflict?
SOMETIMES we feel overwhelmed by the multifaceted conflicts in our society and wonder whether it is unique to us or if the situation is more or less the same in other countries and therefore there is no need to be unduly alarmed.

In some respects, Pakistan is not too different from many other countries with similar characteristics. We are a developing country which chose the path of democracy. Although, at times, we seem to have been tempted by the apparent simplicity and efficiency of autocratic governance, society in general has refused to accept a regimented state and keeps coming back to a democratic system of governance no matter how flawed such governance turns out to be.

We are a multicultural, multilingual state which opted for a federal system of governance with all its attendant challenges and complications compared to a unitary state. Although we did experiment with a unique kind of presidential system in the past in which the president was indirectly elected by an electoral college of 80,000 to 120,000 directly elected persons who also doubled as local government councillors, we ultimately settled for a parliamentary form of government which arguably demands greater political sophistication as the executive and legislature overlap in the legislatures.

We are a struggling developing country with unenviable economic and social development indicators. We have a high population growth rate and a low literacy rate. Pakistan has one of the largest youth populations, which is a great blessing and a huge challenge at the same time.

There are certain areas we need to focus on in order to minimise conflict in society.

These are not unique challenges as a large number of developing countries across continents face similar issues and respond to them with varying degrees of success.

All those countries, as well as developed ones, face various internal conflicts. There is tension between states and the centre even in countries like the United States and Australia. Quebec, the French-speaking province of Canada, suffers from so much separatist sentiment that at one point it was on the brink of opting out of the federal state of Canada. Although the UK is not a federal state in the classical sense, it continues to face centrifugal tendencies in places like Scotland and Northern Ireland.

Next door, India has a much greater degree of cultural, ethnic, religious and linguistic diversity and faces multiple insurgencies driven by one sentiment or the other. And although America has a classical presidential system of governance and many in Pakistan envy the system as they think it ensures greater stability, the federal government there had to be repeatedly shut down in the past decade as the president and Congress could not agree on a budget. These countries were not always able to find non-violent ways to address these conflicts. The declaration of the result of the US presidential election in 2020 was accompanied by unprecedented violence and an assault on the Capitol.

One can, therefore, deduce that in traditional areas of democratic governance, centre-province relations, and in the practice of the parliamentary system, our conflicts and challenges are not so different from those that many other contemporary societies experience. We have done reasonably well in terms of responding to challenges in these areas in Pakistan. We have, for example, agreed on a consensus constitution. After initial setbacks, including the tragedy of separation of one half of the country, we have succeeded in strengthening our federalism through the 18th Constitutional Amendment and the seventh National Finance Commission Award. Our Council of Common Interests is also gradually evolving into an effective institution. We were able to agree on the Indus Water Apportionment Accord among the provinces, which India could not do for a long time with regard to its various river basins. We have also evolved a parliamentary form of governance which has some features of the presidential system as we empowered our prime minister to appoint as many minister-level special assistants outside parliament as required. He or she can also direct a ministry without necessarily going through the concerned minister.

Are there some unique drivers of conflict in Pakistan for which we need to innovate so that we can match the pace of development of comparable states? Apparently yes; there are a few aspects where we need to focus on in order to minimise the areas of conflict.

First, we need to strengthen our democracy by purging influences outside the ambit of the Constitution. In this context, the military’s repeated and candid declaration that they have now decided to stay absolutely clear of politics, as ordained by the Constitution, is a very welcome development. Interference of the establishment, both real and perceived, had been a major reason for stalled progress on the evolution of democracy in Pakistan. Pakistan may not be unique in this respect but we certainly are one of the rare ones. Countries like South Korea, Turkey and Indonesia were almost in the same league as us not long ago but they have made considerable progress especially South Korea — and, in each case, it has paid rich dividends. Despite our security challenges, we can make substantive progress on our democracy project by resolving civil-military conflicts. The current conflictual state of relations in our polity is primarily the result of accumulated mistakes committed in this respect over the last many decades.

Our religious identity and our status as an Islamic Republic is another unique feature of our state. Religion, a highly sensitive issue in Pakistan, needs to be handled very responsibly. Only state institutions should have the power to interpret religious matters affecting public life. There should be zero tolerance for unauthorised religious groups making declarations about someone’s faith or propagating calls for jihad against any country or entity.

Serious stock-taking about the way we have managed our unique religious status and civil-military relations and putting greater focus on reforms in these areas, coupled with much greater emphasis on the economy, will substantively contribute to the resolution of conflicts in our society.

Published in Dawn, October 30th, 2022

10/30/2022

Foreign policy test
THE global order is changing at an incredible speed, and unless states keep up with these changes and configure foreign policy accordingly, they risk getting sucked into the vortex of destructive bloc politics and confrontation. Pakistan, which sits in a difficult neighbourhood and has to manage a number of delicate bilateral relationships, must study its options well, even though its choices have been limited due to economic turmoil and mismanagement, as well as domestic political dissonance. Speaking at an event in Islamabad on Friday, Prime Minister Shehbaz Sharif noted that the country’s relations with ‘friendly’ states had suffered over the past few years, and that he was making “all-out efforts” to mend ties. While the PM’s observation had a clear political angle — criticising his predecessor — there can be little argument about the need to improve ties with foreign partners. Mr Sharif seems to have been giving a renewed push to proactive foreign policy of late, having just returned from Saudi Arabia while he is next headed to China. Of course, Pakistan’s dire financial situation has much to do with this focus. Yet, creating a progressive and robust external policy will require more than just securing loans and MoUs from our foreign friends. It will require us to tread carefully to avoid the landmines lying ahead, and to put our own house in order so that Pakistan’s standing overseas can improve.

Pakistan must balance ties with a diverse collection of foreign partners, who often do not see eye to eye with each other, and many of whom expect this country to take sides when the going gets tough. That will be Pakistan’s principal foreign policy challenge in the days ahead. For example, the US has been a long-time partner of Pakistan, though the relationship has been more transactional than strategic. China and Saudi Arabia have also been steady partners, yet as things stand, the US considers the People’s Republic its number one foreign adversary, while ties between Washington and Riyadh have also started to fray. In such a scenario, will Pakistan be asked to pick sides? This is only one of the challenges that lie ahead. Pakistan’s interests — defence, economic, strategic — must come first, while the elected leadership needs to formulate a sagacious and balanced foreign policy, implemented by professional diplomats, that is able to withstand the strong headwinds that are today shaking the global order.

Published in Dawn, October 30th, 2022

10/25/2022

Now this is dedication!

, the security guard of Karachi University aur inhoun ne se he apna bhi complete krlia hai. Matlab job krte krte Mphil.
And guess whatt!?!
Akhtar has been promoted to 16 grade as a teacher.
Security guard se direct 16 grade! Thats actually something big!

10/25/2022

Heartiest Congratulations
Ms. Sidra Khan appointed as while giving massive encouragement to girls aspiring . Indeed, Sidra is a motivational force for all aspirants

10/23/2022

Ayesha Ehtesham got married during matriculation but always wanted to do CSS. Her struggle for was real. With family, home and children, it was not easy task to do. She spent several years of her life in CSS preparation and finally after two attempts, she got her allocated in . She says keep on moving and chase your dreams one day you will be successful

مصر کے چھوٹے سے گاؤں میں 15 ہزار کتابوں کی ’لائبریری‘ 10/16/2022

مصر کے چھوٹے سے گاؤں میں 15 ہزار کتابوں کی ’لائبریری‘

مصر کے چھوٹے سے گاؤں میں 15 ہزار کتابوں کی ’لائبریری‘
حمد اللہ 50 سال سے کتابیں جمع کر رہے ہیں، جس کا مقصد گاؤں کے لوگوں میں شعور اجاگر کرنا ہے

مصر کے چھوٹے سے گاؤں میں 15 ہزار کتابوں کی ’لائبریری‘ دیوار کے اندر بنا ایک چھوٹا سا کمرہ وہ جگہ ہے جہاں حمداللہ عبد الحفیظ نے اپنی زندگی ہزاروں کتابوں جمع کرنے میں گزار دی۔ مصر کے حمد اللہ ان کتابوں کو اپنے گاؤں دکالیہ ک....

’لوگ آہستہ آہستہ قبول کر لیں گے‘: دیر کی پہلی اسسٹنٹ کمشنر 10/16/2022

’لوگ آہستہ آہستہ قبول کر لیں گے‘: دیر کی پہلی اسسٹنٹ کمشنر

’لوگ آہستہ آہستہ قبول کر لیں گے‘: دیر کی پہلی اسسٹنٹ کمشنر
لوئر دیر میں ایڈیشنل اسسٹنٹ کمشنر بھرتی ہونے والی شوانہ حلیم کہتی ہیں کہ وہ بہت محتاط رہتی ہیں کیونکہ انہیں علاقے میں رول ماڈل کے طور پر دیکھا جاتا ہے۔


’لوگ آہستہ آہستہ قبول کر لیں گے‘: دیر کی پہلی اسسٹنٹ کمشنر قبائلی ضلعے باجوڑ کی شوانہ حلیم پہلی خاتون ہیں جو لوئر دیر میں ایڈیشنل اسسٹنٹ کمشنر بھرتی ہوئی ہیں۔ شوانہ نے پشاور یونیورسٹی سے انگریزی ادب میں ماسٹر کر رکھا ہے۔ وہ ا...

10/15/2022

سعدیہ جعفر سی ایس ایس(CSS) کرنے کے بعد اسسٹنٹ کمشنر وہاڑی تعینات. Congratulations 🎉

10/14/2022

ہمارے ہاں بھی کئی ریلوے سٹیشنوں کے چائے خانے، ویٹنگ روم اور پلیٹ فارم ادیبوں شاعروں کی بیٹھک کے طور پر مشہور رہے ہیں. لیکن بھارت کے ساسارام ریلوے جنکشن کے پلیٹ فارم نوجوانوں کا مستقبل بنانے کی جگہ بن گئے ہیں.
اس سٹیشن کے دو پلیٹ فارموں پر روزانہ دوگھنٹے صبح اور دو گھنٹے شام سیکڑوں نوجوان مقابلے کے مرکزی، صوبائی اور بنکوں کے امتحانوں اور اعلیٰ پیشہ ورانہ تعلیم کے اداروں کے انٹری ٹیسٹس کی تیاری کرنے آتے ہیں. یہ سلسلہ انیس بیس برس سے جاری ہے. آغاز تو اس طرح ہوا کہ بہار کے ضلع روہتاس کے اس علاقے کے دیہات میں بجلی ہے ہی نہیں یا آتی جاتی رہتی ہے اور ریلوے سٹیشن پر چوبیس گھنٹے رہتی ہے، اس لئے کچھ طالب علم اس روشنی سے فائدہ اٹھانے آنے لگے.
پھر یہ ہوا کہ طلباء ایک دوسرے کی مدد کرنے لگے، امتحانات پاس کرچکے یا دوسرے سینئر نوجوان کوچنگ کیلئے یہاں آنے لگے اور سٹڈی گروپ بن گئے. یوں یہ جانا پہچانا مرکز بن گیا.
ریلوے پلیٹ فارم پر جانے کیلئے پلیٹ فارم ٹکٹ کی ضرورت ہوتی ہے، وہ نہ ہو تو بلا ٹکٹ مسافر سمجھا جاتا ہے. لیکن ریلوے حکام نے ان نوجوانوں کی حوصلہ افزائی کیلئے انہیں پلیٹ فارم ٹکٹ سے مستثنیٰ کردیا ہے. لیکن اس شناخت کیلئے کہ وہ طالب علم ہی ہیں، کوئی 500 کو شناختی کارڈ جاری کردیئے ہیں. ان میں سے کئی تو سارا دن یہیں گزارتے ہیں اور بعض تو پڑھتے پڑھتے سو بھی پلیٹ فارم پر ہی جاتے ہیں. یہاں تیاری کرنے والے بے شمار غریب نوجوان اعلیٰ ملازمتیں یا اعلیٰ پیشہ ورانہ اداروں میں داخلے حاصل کرچکے ہیں

(اسلم ملک کی وال سے)

12/12/2021

online.fpsc.gov.pk

سی ایس ایس 2022 کے امتحانات کے لیے ملک بھر میں رجسٹریشن کا آغاز November15 سے ہوگیا .

سی ایس ایس میں اپلائی کرنے کی آخری تاریخ 15 دسمبر ہے.

امیدوار اس لنک سے آن لائن اپلائی کر سکتے ہیں
https://online.fpsc.gov.pk/fpsc/css_prelim_exam_2022/user/profile/newaccount.php?a=displayLogin

اب کی بار امتحان میں بہت سی تبدیلیاں لائیں گے Css امتحانات سے قبل ایک سکرین آؤٹ ٹیسٹ approve ہوگیا ہے.

اس کے بعد اب جو exam ہوں گے اس میں 200 نمبر کا سکریننگ ٹیسٹ ہوگا
جو لوگ اس میں پاس کریں گے وہ لوگ written دے سکیں گے.

اور یہ 200 MCQs سوالات پر مشتمل ہوگا جس میں انگلش پاکستان سٹڈیز اسلامیات اور جنرل سائنس+ میتھ میں سے سوالات پوچھے جائیں گے.

اسلام آباد سرکاری ذرائع کے مطابق ملک بھر سے تمام تر امیدوار جو سی ایس ایس

2022 کے امتحانات میں شرکت کرنا چاہتے ہیں وہ پہلے اسکریننگ ٹیسٹ کلیئر کریں گے

ذرائع کے مطابق طلبہ سی ایس ایس 2022 کے امتحانات میں شرکت کے لیے فیڈرل

اس کے بعد ہی پبلک سروس کمیشن (ایف پی ایس سی) پورٹل پر درخواست جمع کرا سکتے ہیں۔

یاد رہے کہ درخواست دہندگان کو لازمی دستاویزات کے ساتھ اپنی درخواست کی

ہارڈ کاپی فیڈرل پبلک سروس کمیشن (ایف پی ایس سی) کے

ہیڈ کوارٹر میں MPT ٹیسٹ کلیئر ہونے کے بعد ہی جمع کروا سکتے ہیں ۔

سی ایس ایس کے امتحانات 30 مئی 2022 سے ملک کے 19 شہروں میں ہوں گے۔

جن میں ایبٹ آباد، بہاولپور، ڈی جی خان، ڈی آئی خان، فیصل آباد، گلگت، گوجرانوالہ،

حیدرآباد، اسلام آباد، کراچی، لاہور، لاڑکانہ، ملتان، مظفر آباد، پشاور،

کوئٹہ، راولپنڈی اور دیگر شامل ہیں۔

گریجویشن میں سیکنڈ ڈویژن رکھنے والے 21 سے 30 سال کے بعد مرد و خواتین

بشمول خصوصی افراد امتحانات دینے کے اہل ہوں گے جب کہ

خصوصی افراد کے لیے عمر میں 2 سال کی رعایت ہوگی۔

سی ایس ایس امتحان کی تیاری کے لیئے کن باتوں کو مدنظر رکھنا چاہیئے ؟

یہ ذہن میں رہے کہ سی ایس ایس میں سلیکشن ننانوے فیصد میرٹ پر ہوتی ہے،

ایسے بھی طالب علم تھے جن کے پاس پہننے کو جوتے نہیں تھے

انہوں نے بھی سی ایس ایس پاس کیا .

ایسے طالب علم بھی تھے جو ٹیویشن پڑھاتے تھے اور ساتھ ہی ساتھ

سی ایس ایس کی تیاری بھی کرتے تھے.

ایسے بھی تھے جنہوں نے مشکلات کے باجود بھی سی ایس ایس کیا

ایسے لوگوں کی مشکلات ہی ان کی طاقت بنتی ہے ۔

یہ ممکن ہے کہ کسی کا تعلق کھاتے پیتے گھرانے سے ہو اس کے پاس ہر طرح اسائشیں ہوں

لیکن وہ امتحان میں رہ جائے ۔

سی ایس ایس ایک مزاج ہے جس میں بندہ پڑھتا ہے ، لکھتا ہے اور سیکھتا ہے۔

اس امتحان میں کامیابی اسی کو ملتی ہے جو آخر تک تیاری کرتا رہتا ہے

اگر کوئی یہ کہے کہ میں نے چارماہ دل لگا کر تیار ی کی ہے اب کچھ ریسٹ کر لیاجائے.

پھر نئے جذبےکے تحت تیاری کروں گا ایسے شخص کےلیے امتحان پاس کرنا مشکل ہو جاتا ہے۔

اگر سی ایس ایس کے امتحان میں بیس ہزار لوگ اپلائی کرتےہیں

توتین چار ہزار لوگ امتحان میں بیٹھتے ہی نہیں ہیں اس کی وجہ یہ ہے کہ

وہ پریشر کو مینج نہیں کر پاتے۔

جو امتحان دینا چاہتا ہے اسے سمجھنا چاہیے کہ اس امتحان کے تین چانس ہیں

اگر نہ دیا یہ تب بھی ضائع ہو جائیں گے اگر دیا اور پاس نہ ہوسکا تب بھی ضائع ہو جائیں گے.

بہتر یہ ہے کہ امتحان دیا جائے جس شخص کے ذہن میں یہ بیٹھ جائے اگر پاس نہ ہوسکا

تو کیا ہوگا ؟

اس سے دماغ میں پریشر آجاتا ہے جس کی وجہ سے اس کی آدھی توانائی ضائع ہو جاتی ہے۔

کیو نکہ جلدی ،گھبراہٹ اور غصہ ان تین حالتوں میں بندہ غلطی کرتا ہے

اگران تینوں کو مینج کیا جائے تو تیاری میں آسانی ہو جاتی ہے ۔

گروپ سٹڈی کرنی چاہیے اس سے یہ آسانی ہو تی ہے کہ گروپ میں کسی

کو ایک مضمون کے بارے میں کچھ بھی پتا نہیں ہے دوسرے کے بتانے سے اس کےعلم میں بھی اضافہ ہو جائے گا ۔

اور پھر نفسیات یہ کہتی ہے کہ بندہ جب دوسرے کو بتاتا ہے

تو وہ انسان کی میموری میں محفوظ ہونا شروع ہو جاتا ہے ۔

پھر وہ چیز بھولتی نہیں ہے اچھی تیاری کے لیے بہتر یہ ہے کہ جو کچھ پڑھا ہے۔

اس کا بار بار ٹیسٹ دیا جائے اس سے تیار ی میں آسانی ہو گی۔

روز کسی ایک انگلش اخبار کو ضرور پڑھنا چاہیے لیکن اس کو ذہن پر سوار نہ کیا جائے کہ

مجھے روز اخبار پڑھنا ہے بلکہ اس کو انجوائے کریں۔

جو شخص امتحان دینا چاہتا ہے اسے چاہیے کہ خود سے تیاری کرنے کی بجائے

کسی اچھے استاد سے پڑھے اور تیاری کرے اس سے یہ فائدہ ہوگا کہ

ایک روٹین بن جائے گی لیکن کسی ایسی جگہ نہ جائیں جو سبز باغ بیچ رہے ہوں ۔

لیکن اگر کسی سے تیاری نہیں کرنا چاہتے تو کم ازکم انگلش کی تیاری کسی اچھے استاد سے

ضرروکریں کیو نکہ نوے فیصد ایسے طالب علم ہوتے ہیں جن کو انگلش کی تیاری ضرورت ہوتی ہے ۔

آپشنل مضمون ریوائز ہو گئے ہیں اور جو لازمی ہیں وہ اسی طرح ہیں۔

برصغیر کی تاریخ کے پہلے دوسو نمبر ہوتے تھے اب سو کر دیئے گئے ہیں ۔

انٹرنیشنل ریلیشن کے بارے میں سب سے زیادہ معلوم ہونا چاہیے ۔

پاکستان افیئر کے سونمبر ہیں اس میں بھی ستر سے اسی نمبر کا تعلق انٹرنیشنل ریلیشن سے ہے ۔

جبکہ انٹرنیشنل ریلیشن کے خود دوسو نمبر ہیں پھر انٹرنیشنل لاء آجاتاہے ۔

نئے مضامین میں جنڈر سٹدیز نیا مضمون آیا ہے یہ خواتین کے حقوق کے بارے میں ہے یہ مضمون قدرے آسان ہے ۔

اسی طرح سوشیالوجی بھی آسان مضمون ہے ،پہلے لوگ عربی اور فارسی رکھتے تھے ۔

ان کے دوسو نمبر ہوتے تھے اب ان دونوں مضامین کو سایئڈ پر کر دیا گیا ہے۔

اب ان کے سو نمبر کر دیئے ہیں علاقائی زبان کوضرور رکھیں اس سے یہ فائدہ ہوتا ہے کہ

جو پروفیسرز صاحبان ہوتےہیں۔

ان کی اپنی اس زبان سے وابستگی ہوتی ہے اور وہ اپنے مضمون کو پرموٹ کرتے ہیں۔

اگر کسی طالب علم کا سائنس کا بیک گراؤنڈ ہے تو اس کو چاہیے

کہ انوائرمینٹل سائنسز نیا مضمون ہے

اس کو رکھیں اس کے ساتھ ٹاؤن پلاننگ رکھیں اس میں یہ ہوگا کہ

ایک مضمون کا پڑھا ہوا دوسرے مضمون میں کام آتا ہے۔

شکریہ

online.fpsc.gov.pk

11/20/2021

Repeatedly ask 100 اشعار
1.زندگی زندہ دلی کا ہے نام
مردہ دل خاک جیا کرتے ہیں
امام بخش ناسخ

2. باغباں نے آگ دی جب آشیانے کو مرے
جن پہ تکیہ تھا وہی پتے ہوا دینے لگے
ثاقب لکھنوی

3. یہ مجھے چین کیوں نہیں پڑتا
ایک ہی شخص تھا جہان میں کیا
جون ایلیا

3. قتل حسین اصل میں مرگِ یزید ہے
اسلام زندہ ہوتا ہے ہر کربلا کے بعد
مولانا محمد علی جوہر

4. نازکی اس کے لب کی کیا کہیئے
پنکھڑی اک گلاب کی سی ہے
میر تقی میر

5. خودی کا سر نہاں لا الہ الا اللہ
خودی ہے تیغ فساں لا الہ الا اللہ
علامہ اقبال

6. دامن پہ کوئی چھینٹ، نہ خنجر پہ کوئی داغ
تم قتل کرو ہو کہ کرامات کرو ہو
کلیم عاجز

7. قیس جنگل میں اکیلا ہے مجھے جانے دو
خوب گزرے گی جو مل بیٹھیں گے دیوانے دو
میاں داد خان سیاح

8. رندِ خراب حال کو زاہد نہ چھیڑ تو
تجھ کو پرائی کیا پڑی اپنی نبیڑ تو
ابراہیم ذوق

9. ایک تو خواب لیے پھرتے ہو گلیوں گلیوں
اس پہ تکرار بھی کرتے ہو خریدار کے ساتھ
احمد فراز

10. خنجر چلے کسی پہ تڑپتے ہیں ہم امیر
سارے جہاں کا درد ہمارے جگر میں ہے
امیر مینائی

11. چل ساتھ کہ حسرت دلِ محروم سے نکلے
عاشق کا جنازہ ہے ذرا دھوم سے نکلے
فدوی عظیم آبادی

12. پھول کی پتیّ سے کٹ سکتا ہے ہیرے کا جگر
مردِ ناداں پر کلامِ نرم و نازک بے اثر
علامہ اقبال

13. تھا جو ناخوب بتدریج وہی خوب ہوا
کہ غلامی میں بدل جاتا ہے قوموں کا ضمیر
علامہ اقبال

14. مدعی لاکھ برا چاہے تو کیا ہوتا ہے
وہی ہوتا ہے جو منظورِ خدا ہوتا ہے
برق لکھنوی

15. فصل بہار آئی، پیو صوفیو شراب
بس ہو چکی نماز، مصلّہ اٹھایئے
حیدر علی آتش

16. آئے بھی لوگ، بیٹھے بھی، اٹھ بھی کھڑے ہوئے
میں جا ہی ڈھونڈتا تیری محفل میں رہ گیا
حیدر علی آتش

17. مری نمازہ جنازہ پڑھی ہے غیروں نے
مرے تھے جن کے لیے، وہ رہے وضو کرتے
حیدر علی آتش

18. امید وصل نے دھوکے دیے ہیں اس قدر حسرت
کہ اس کافر کی ’ہاں‘ بھی اب ’نہیں‘ معلوم ہوتی ہے

چراغ حسن حسرت

19. داور حشر میرا نامہء اعمال نہ دیکھ
اس میں کچھ پردہ نشینوں کے بھی نام آتے ہیں

محمد دین تاثیر

20. اب یاد رفتگاں کی بھی ہمت نہیں رہی
یاروں نے کتنی دور بسائی ہیں بستیاں

فراق گورکھپوری

21. ہر تمنا دل سے رخصت ہوگئی
اب تو آجا اب تو خلوت ہوگئی

عزیز الحسن مجذوب

22. وہ آئے بزم میں اتنا تو برق نے دیکھا
پھر اس کے بعد چراغوں میں روشنی نہ رہی

مہاراج بہادر برق

23. چتونوں سے ملتا ہے کچھ سراغ باطن کا
چال سے تو کافر پہ سادگی برستی ہے

یگانہ چنگیزی

24. دیکھ کر ہر در و دیوار کو حیراں ہونا
وہ میرا پہلے پہل داخل زنداں ہونا

عزیز لکھنوی

25. اپنے مرکز کی طرف مائل پرواز تھا حسن
بھولتا ہی نہیں عالم تیری انگڑائی کا

عزیز لکھنوی

26. دینا وہ اس کا ساغرِ مئے یاد ہے نظام
منہ پھیر کر اُدھر کو، اِدھر کو بڑھا کے ہاتھ

نظام رام پوری

27. یہی فرماتے رہے تیغ سے پھیلا اسلام
یہ نہ ارشاد ہوا توپ سے کیا پھیلا ہے

اکبر الہٰ آبادی

28. بے پردہ کل جو آئیں نظر چند بیبیاں
اکبر زمیں میں غیرت قومی سے گڑ گیا
پوچھا جو ان سے آپ کا پردہ وہ کیا ہوا
کہنے لگیں کہ عقل پہ مردوں کی پڑ گیا

اکبر الہٰ آبادی

29. آ عندلیب مل کر کریں آہ و زاریاں
تو ہائے گل پکار میں چلاؤں ہائے دل

گمنام

30. اقبال بڑا اپدیشک ہے، من باتوں میں موہ لیتا ہے
گفتار کا یہ غازی تو بنا، کردار کا غازی بن نہ سکا

علامہ اقبال

31. توڑ کر عہد کرم نا آشنا ہو جایئے
بندہ پرور جایئے، اچھا، خفا ہو جایئے

حسرت موہانی

32. تمہیں چاہوں، تمہارے چاہنے والوں کو بھی چاہوں
مرا دل پھیر دو، مجھ سے یہ جھگڑا ہو نہیں سکتا

مضطر خیر آبادی

33. دیکھ آؤ مریض فرقت کو
رسم دنیا بھی ہے، ثواب بھی ہے

حسن بریلوی

34. خلاف شرع شیخ تھوکتا بھی نہیں
مگر اندھیرے اجالے میں چوکتا بھی نہیں

اکبر الہٰ آبادی

35. دیکھا کیے وہ مست نگاہوں سے بار بار
جب تک شراب آئے کئی دور ہوگئے

شاد عظیم آبادی

36. ہم نہ کہتے تھے کہ حالی چپ رہو
راست گوئی میں ہے رسوائی بہت

الطاف حسین حالی

37. سب لوگ جدھر وہ ہیں، ادھر دیکھ رہے ہیں
ہم دیکھنے والوں کی نظر دیکھ رہے ہیں

داغ دہلوی

38. دی مؤذن نے شب وصل اذاں پچھلی رات
ہائے کم بخت کو کس وقت خدا یاد آیا

داغ دہلوی

39. گرہ سے کچھ نہیں جاتا، پی بھی لے زاہد
ملے جو مفت تو قاضی کو بھی حرام نہیں

امیر مینائی

40. فسانے اپنی محبت کے سچ ہیں، پر کچھ کچھ
بڑھا بھی دیتے ہیں ہم زیب داستاں کے لیے

مصطفیٰ خان شیفتہ

41. ذرا سی بات تھی اندیشہِ عجم نے جسے
بڑھا دیا ہے فقط زیبِ داستاں کے لیے

علامہ اقبال

42. ہر چند سیر کی ہے بہت تم نے شیفتہ
پر مے کدے میں بھی کبھی تشریف لایئے

مصطفیٰ خان شیفتہ

43. وہ شیفتہ کہ دھوم ہے حضرت کے زہد کی
میں کیا کہوں کہ رات مجھے کس کے گھر ملے

مصطفیٰ خان شیفتہ

44. لگا رہا ہوں مضامین نو کے انبار
خبر کرو میرے خرمن کے خوشہ چینوں کو

میر انیس

45. شب ہجر میں کیا ہجوم بلا ہے
زباں تھک گئی مرحبا کہتے کہتے

مومن خان مومن

46. الجھا ہے پاؤں یار کا زلف دراز میں
لو آپ اپنے دام میں صیاد آگیا

مومن خان مومن

47. اذاں دی کعبے میں، ناقوس دیر میں پھونکا
کہاں کہاں ترا عاشق تجھے پکار آیا

محمد رضا برق

48. کوچہء عشق کی راہیں کوئی ہم سے پوچھے
خضر کیا جانیں غریب، اگلے زمانے والے

وزیر علی صبا

49. دم و در اپنے پاس کہاں
چیل کے گھونسلے میں ماس کہاں

مرزا غالب

50. گو واں نہیں، پہ واں کے نکالے ہوئے تو ہیں
کعبے سے ان بتوں کو نسبت ہے دور کی

مرزا غالب

51. جانتا ہوں ثواب طاعتِ و زہد
پر طبیعت ادھر نہیں آتی

مرزا غالب

52. غالب برا نہ مان جو واعظ برا کہے
ایسا بھی کوئی ہے کہ سب اچھا کہیں جسے

مرزا غالب

53. بلبل کے کاروبار پہ ہیں خندہ ہائے گل
کہتے ہیں جس کو عشق خلل ہے دماغ کا

مرزا غالب

54. اسی لیے تو قتل عاشقاں سے منع کرتے ہیں
اکیلے پھر رہے ہو یوسف بے کارواں ہو کر

خواجہ وزیر

55. زاہد شراب پینے سے کافر ہوا میں کیوں
کیا ڈیڑھ چلو پانی میں ایماں بہہ گیا

محمد ابراہیم ذوق

56. ہزار شیخ نے داڑھی بڑھائی سن کی سی
مگر وہ بات کہاں مولوی مدن کی سی

اکبر الہٰ آبادی

57. فکر معاش، عشق بتاں، یاد رفتگاں
اس زندگی میں اب کوئی کیا کیا، کیا کرے

محمد رفیع سودا

58. یہ دستورِ زباں بندی ہے کیسا تیری محفل میں
یہاں تو بات کرنے کو ترستی ہے زباں میری

علامہ اقبال

59. تقدیر کے قاضی کا یہ فتویٰ ہے ازل سے
ہے جرم ضعیفی کی سزا مرگِ مفاجات

علامہ اقبال

60. یہ بزم مئے ہے یاں کوتاہ دستی میں ہے محرومی
جو بڑھ کر خود اٹھا لے ہاتھ میں وہ جام اسی کا ہے

شاد عظیم آبادی

61. حیات لے کے چلو، کائنات لے کے چلو
چلو تو سارے زمانے کو ساتھ لے کے چلو

مخدوم محی الدین

62. اگر بخشے زہے قسمت نہ بخشے تو شکایت کیا
سر تسلیمِ خم ہے جو مزاجِ یار میں آئے

میر تقی میر

63. اندازِ بیاں گرچہ بہت شوخ نہیں ہے
شاید کہ اتر جائے ترے دل میں مری بات

اقبال

64. آہ کو چاہیئے اک عمر اثر ہونے تک
کون جیتا ہے تیری زلف کے سر ہونے تک

مرزاغالب

65. اور بھی دکھ ہیں زمانے میں محبت کے سوا
راحتیں اور بھی ہیں وصل کی راحت کے سوا

فیض احمد فیض

66. دائم آباد رہے گی دنیا
ہم نہ ہوں گے کوئی ہم سا ہوگا

ناصر کاظمی

67. نیرنگیِ سیاستِ دوراں تو دیکھیئے
منزل انہیں ملی جو شریک سفر نہ تھے

محسن بھوپالی

68. اب تو جاتے ہیں بت کدے سے میر
پھر ملیں گے اگر خدا لایا

میر تقی میر

69. شرط سلیقہ ہے ہر اک امر میں
عیب بھی کرنے کو ہنر چاہیئے

میر تقی میر

70. بہت کچھ ہے کرو میر بس
کہ اللہ بس اور باقی ہوس

میر تقی میر

71. بھانپ ہی لیں گے اشارہ سر محفل جو کیا
تاڑنے والے قیامت کی نظر رکھتے ہیں

مادھو رام جوہر

72. عمر دراز مانگ کے لائے تھے چار دن
دو آرزو میں کٹ گئے، دو انتظار میں

بہادر شاہ ظفر

73. بیٹھنے کون دے ہے پھر اس کو
جو تیرے آستاں سے اٹھتا ہے

میر تقی میر

74. ہم فقیروں سے بے ادائی کیا
آن بیٹھے جو تم نے پیار کیا

میر تقی میر

75. سخت کافر تھا جس نے پہلے میر
مذہبِ عشق اختیار کیا

میر تقی میر

76. نہ تو زمیں کے لیے ہے نہ آسماں کے لیے
جہاں ہے تیرے لیے تو نہیں جہاں کے لیے

علامہ اقبال

77. کانٹے تو خیر کانٹے ہیں ان سے گلہ ہے کیا
پھولوں کی واردات سے گھبرا کے پی گیا
ساغر وہ کہہ رہے تھے کی پی لیجیئے حضور
ان کی گزارشات سے گھبرا کے پی گیا

ساغر صدیقی

78. زمانہ آیا ہے بے حجابی کا عام دیدارِ یار ہوگا
سکوت تھا پردہ دار جس کا وہ راز اب آشکار ہوگا
علامہ اقبال

79. دن کٹا، جس طرح کٹا لیکن
رات کٹتی نظر نہیں آتی
سید محمد اثر

80. تدبیر میرے عشق کی کیا فائدہ طبیب
اب جان ہی کے ساتھ یہ آزار جائے گا
میر تقی میر

81. میرے سنگ مزار پر فرہاد
رکھ کے تیشہ کہے ہے، یا استاد
میر تقی میر

82. ٹوٹا کعبہ کون سی جائے غم ہے شیخ
کچھ قصر دل نہیں کہ بنایا نہ جائے گا
قائم چاند پوری

83. زندگی جبر مسلسل کی طرح کاٹی ہے
جانے کس جرم کی پائی ہے سزا یاد نہیں
ساغر صدیقی

84. ہشیار یار جانی، یہ دشت ہے ٹھگوں کا
یہاں ٹک نگاہ چوکی اور مال دوستوں کا
نظیر اکبر آبادی

85. پڑے بھٹکتے ہیں لاکھوں دانا، کروڑوں پنڈت، ہزاروں سیانے
جو خوب دیکھا تو یار آخر، خدا کی باتیں خدا ہی جانے
نظیر اکبر آبادی

86. دنیا میں ہوں، دنیا کا طلب گار نہیں ہوں
بازار سے گزرا ہوں، خریدار نہیں ہوں
اکبر الہٰ آبادی

87. کہوں کس سے قصہ درد و غم، کوئی ہم نشیں ہے نہ یار ہے
جو انیس ہے تری یاد ہے، جو شفیق ہے دلِ زار ہے
مجھے رحم آتا ہے دیکھ کر، ترا حال اکبرِ نوحہ گر
تجھے وہ بھی چاہے خدا کرے کہ تو جس کا عاشق زار ہے
اکبر الہٰ آبادی

88. نئی تہذیب سے ساقی نے ایسی گرمجوشی کی
کہ آخر مسلموں میں روح پھونکی بادہ نوشی کی
اکبر الہٰ آبادی

89. مے پئیں کیا کہ کچھ فضا ہی نہیں
ساقیا باغ میں گھٹا ہی نہیں
امیر مینائی

90. اُن کے آتے ہی میں نے دل کا قصہ چھیڑ دیا
الفت کے آداب مجھے آتے آتے آئیں گے
ماہر القادری

91. کہہ تو دیا، الفت میں ہم جان کے دھوکہ کھائیں گے
حضرت ناصح! خیر تو ہے، آپ مجھے سمجھائیں گے؟
ماہر القادری

92. اگرچہ ہم جا رہے ہیں محفل سے نالہء دل فگار بن کر
مگر یقیں ہے کہ لوٹ آئیں گے نغمہء نو بہار بن کر
یہ کیا قیامت ہے باغبانوں کے جن کی خاطر بہار آئی
وہی شگوفے کھٹک رہے ہیں تمھاری آنکھوں میں خار بن کر
ساغر صدیقی

93. آؤ اک سجدہ کریں عالمِ مدہوشی میں
لوگ کہتے ہیں کہ ساغر کو خدا یاد نہیں
ساغر صدیقی

94. محشر کا خیر کچھ بھی نتیجہ ہو اے عدم
کچھ گفتگو تو کھل کے کریں گے خدا کے ساتھ
عبدالحمید عدم

95. عجیب لوگ ہیں کیا خوب منصفی کی ہے
ہمارے قتل کو کہتے ہیں، خودکشی کی ہے
حفیظ میرٹھی

96. صد سالہ دور چرخ تھا ساغر کا ایک دور
نکلے جو مے کدے سے تو دنیا بدل گئی
گستاخ رام پوری

97. چل پرے ہٹ مجھے نہ دکھلا منہ
اے شبِ ہجر تیرا کالا منہ
بات پوری بھی منہ سے نکلی نہیں
آپ نے گالیوں پہ کھولا منہ
مومن خان مومن

98. سلسلے توڑ گیا وہ سبھی جاتے جاتے
ورنہ اتنے تو مراسم تھے کہ آتے جاتے
احمد فراز

99. مٹی کی محبت میں ہم آشفتہ سروں نے
وہ قرض اتارے ہیں جو واجب بھی نہیں تھے
افتخار عارف

100. دیوار کیا گری مرے خستہ مکان کی
لوگوں نے میرے صحن میں رستے بنا لیے
سبط علی صبا

Location

Category

Website

Address


Maheen Academy Of Arts And Sciences
St. Louis, MO
63100

Other Education in St. Louis (show all)
Caring For Your Loved One At Home Caring For Your Loved One At Home
St. Louis, 63123

Site for caregivers, especially those caring for their loved ones at home.

Boys Hope Girls Hope Boys Hope Girls Hope
5257 Shaw Avenue, Suite 202
St. Louis, 63110

Boys Hope Girls Hope's mission is to nurture and guide motivated young people in need to become well

PCA Historical Center PCA Historical Center
478 Covenant Lane
St. Louis, 63141

Denominational archives of the Presbyterian Church in America, preserving the records of five Presby

FOCUS St. Louis FOCUS St. Louis
815 Olive Street Ste 110
St. Louis, 63101

Engaging citizens to strengthen the St. Louis region.

Siteman Cancer Center Siteman Cancer Center
4921 Parkview Place
St. Louis, 63110

A National Cancer Institute Comprehensive Cancer Center and member of the National Comprehensive Can

earthday365 earthday365
4125 Humphrey Street
St. Louis, 63116

Nonprofit organization working year-round to educate & empower the St. Louis community for a more su

Best Choice STL Best Choice STL
11780 Borman Drive
St. Louis, 63146

Operated by ThriVe St. Louis. Changing the conversation about s*x. For free & confidential services: www.thrivestlouis.org

Safe Connections Safe Connections
2165 Hampton Avenue
St. Louis, 63139

Supporting survivors of relationship violence through education, crisis intervention, and counseling.

St. Louis Dancing Classrooms St. Louis Dancing Classrooms
5th Grade Classrooms In Street Louis
St. Louis, [email protected]

Transforming lives one dance step at a time.

The Young Scientist Program The Young Scientist Program
4566 Scott Avenue, Box 8213
St. Louis, 63110

YSP at Washington University works with the St. Louis area public schools teaching, recruiting, and

Mad Science Mad Science
8420 Olive Boulevard, # R
St. Louis, 63132

Mad Science of St. Louis is the world leader in FUN science. We strive to spark imaginative learning in middle school and elementary students. Mad Science provides unique, fun, interactive, and educational programming! Call us at 314-991-8000!

Silent Weekend STLCC Silent Weekend STLCC
St. Louis, 63043

Get registered for Silent Weekend! Call 314-984-7777 to register before the course fills up!